Monthly Archives: August, 2015

Popular Top 10 Wonders of The World

There is the list of  top 10 wonders of the world which are the masterpiece of the skill and handwork of the people of that era. Today we become astonished to see these wonders that in so remote ages without any modern technology and machine how so great construction were made.

The Top 10 Wonders of The World

world-wonder

It is a waterfall located in southern Africa on the Zambezi River between the countries of Zambia and Zimbabwe.

popular-world-wonders

popular-wonders-in-world

great-rift-vellyaethopia-great-rift-valley

giants-causeway-irelandireland-giants-causeway

It was constructed by famous Mughal ruler Shah Jahan in memory of his beloved wife Mumtaz Mahal.

taj-mehal

AdiL

taj-mehal-in-india tera-kotta-armyarmy-tera-kotta

The Great Wall of China was constructed 7th century BC. It is a series of fortification built to protect the empire of China.

china-great-wall great-wall-in-china famous-world-wondersngorongoro-crater-tanzania

July 25, 2015 What has changed for Pakistan under Azhar?

Azhar Ali: the driving force behind the Azhar Ali: the driving force behind the “new” Pakistan?

Maybe it really is a new dawn for their batting. Or is it?

It doesn’t take long to flip the narrative.

At the end of April, Pakistan ended up on the wrong side of a whitewash in Bangladesh. This was seen in the local press as the nadir, a “national embarrassment”, the “lowest point”. A decrepit system that had produced a generation that wasn’t good enough – added to Pakistan’s role as a pariah in cricket’s accelerated evolution – had meant that they had been left behind by the rest of the world as far as the ODI game was concerned. Azhar Ali was just mini-Misbah, another of the establishment’s cronies, leading Pakistan further into the depths.

Now, though, we know the truth. The only problem with Pakistan was the negative attitude of Misbah-ul-Haq / the disruptive influence of Shahid Afridi (delete as per your biases). All Pakistan needed was a middle order that could bat briskly / a lower order that could bat responsibly (delete as per your biases). And this is proved by how well Pakistan are batting now, led by Azhar – who is the captain that Misbah should have been: conservative yet still allowing his batsmen enough freedom to express themselves.

It really doesn’t take long to flip the narrative.

But the trouble with all-encompassing narratives is that they risk relying on small sample sizes. Perhaps it really is the dawn of a new age for Pakistani batting, but basing that on what we have seen so far seems reductive. The question to be asked is: what has really changed?

Azhar is the captain that Misbah should have been: conservative yet still allowing his batsmen enough freedom to express themselves

One unprecedented change has been to Pakistan’s fielding. Despite the presence of Rahat Ali and Mohammad Irfan – men who make Bambi on ice look like a Roger Federer forehand – Pakistan now have a fielding unit that can no longer be described as something more suited to being watched on a black-and-white TV. But that doesn’t affect the batting or the narrative.

The other change – and the stat that is being fingered repeatedly – has been in the scores Pakistan are putting up now. Whereas 250 was widely seen as the limit of Pakistan’s ambitions under Misbah, it is now par for the course. Proof, if ever it was needed that the batsmen were being held back. Pakistan are putting up big scores, the batsmen are batting faster, all is right with the world.

Yet deconstructing the numbers reveals a different picture. In Bangladesh, Pakistan scored 239 and 250 in their two ODIs batting first, in comparison to the 253 they averaged under Misbah there with the same parameters.

What followed was a home series against Zimbabwe – which really doesn’t have an equivalent in the Misbah or Afridi eras; while the UAE served as a pretty decent alternative, there is no place like your actual home, as Dorothy so nearly said. Playing on pitches that you grew up on, where your performances resulted in selection for the national team, is something that is taken for granted elsewhere, but that’s not the case in Pakistan (it’s something Ahmer Naqvi and I have previously covered). On the odd occasion, the tracks in the Emirates were carbon copies of List A tracks in Pakistan (for instance, on the Sri Lanka tour of 2013-14, when the scoreline was 3-2 in Pakistan’s favour). Thus the “change” has really been based on the four ODIs in Sri Lanka, it would seem.

Pakistan now have a fielding unit that can no longer be described as something more suited to being watched on a black-and-white TV © AFP

Perhaps a more accurate reflection of Pakistan under Misbah, and what has actually changed, can be gathered from Pakistan’s record in the UAE over the past four years. Pakistan’s average score batting first under Misbah there was 246, which is neither here nor there. But delve into it a bit more and a clearer picture emerges – Pakistan’s average score when they played their full quota of overs was 287; when they didn’t, it was 221.

This really was the story of Pakistan under Misbah. You can sort of understand the argument that Misbah’s tuk-tuk led to Pakistan’s failures while chasing (an argument worth dissecting too, but on another day), but without the pressure of having to chase, Pakistan were still pretty abject with the bat. They were bowled out in 19 of their 44 matches batting first under him – their average score when they did bat 50 overs was 264, and they lost only a quarter of these matches.

The reason Misbah failed, the reason Afridi failed, the reason Pakistan failed, all had the same root. Misbah had to come in too early, meaning he had to curb his natural game

In the era of capitalising on solid starts Pakistan have rarely had starts to capitalise on. When Misbah batted at four, more than a third of the time he came in with the score under 40; when he batted at five, he came in with the score under 50 nearly a third of the time. In 2013, in ODIs Pakistan had the second worst opening partnership average among Test-playing nations. In 2014 it improved all the way to sixth best.

The reason Misbah failed, the reason Afridi failed, the reason Pakistan failed all had the same root. Misbah had to come in too early, resulting in him having to curb his natural game; Afridi came in too early to be able to make best use of his death-overs expertise; Pakistan ended up being bowled out in nearly half their matches batting first.

Perhaps it’s a fleeting change – one that has previously resulted in false dawns for Pakistan fans at the hands of Nasir Jamshed and Ahmed Shehzad – but it doesn’t hurt to have the man with the fifth-highest List A average ever providing you with the start you have so often lacked.

Shoaib Malik has played his role in Pakistan’s ODI resurgence © Associated Press

Shoaib Malik, the new-old lynchpin in Pakistan’s batting order, has played seven innings in his comeback now – the average score when he has strode out to bat has been 164 (the only time he came in to bat with the score under 120 is also Pakistan’s only loss in this run). From the depths of 2013 and 2014, Pakistan have stumbled upon the best opening partnership average in the world this year – despite the pre-Sarfraz debacle that was the World Cup.

Thus it is correct to take issue with what Misbah did – perhaps not with his beliefs, but certainly with his conviction in those beliefs. He was accused during his time of backing Malik excessively (who played 13 consecutive ODIs from December 2012 to June 2013 – scoring no fifties and picking up two wickets) and was accused of trying to turn the national team into his all-conquering SNGPL side. Yet the “resurgence” has been led by Malik and SNGPL players.

And foremost among them has been Azhar Ali – the man who is Misbah’s protégé in popular imagination, the man for whom he could fight the selection committee, the man he recommended and pushed for as his successor. While the likes of Younis, Asad Shafiq and a plethora of openers were repeatedly given rope over the last four years, despite their glut of failures, Azhar was given far fewer chances than seems defensible now. Either Misbah didn’t rate him in the shorter format, or didn’t have the pull to force him into the team – neither of which reflect all too well on him. Thus, while it makes sense to question Misbah the ODI captain, foremost among those questions ought to be about his exclusion of Azhar.

Alas, that doesn’t really fit with the narrative on either side.

Hassan Cheema is a sports journalist, writer and commentator, and co-hosts the online cricket show Pace is Pace Yaar. @mediagag

Pakistan news August 19, 2015 Amir, Asif, Butt free to play all cricket from September 2

http://www.espncricinfo.com/ci/content/video_audio/redirect.html?externalId=cric:55d4b0d5e4b07eaac9223e9b

The sanctions against Pakistan’s Mohammad Amir, Mohammad Asif and Salman Butt will expire on September 1, the ICC has confirmed. That means the trio, who were banned for their role in spot-fixing on Pakistan’s tour to England in 2010, can return to competitive cricket – including international cricket – from September 2.

Butt, Asif and Amir were banned for 10 (five years suspended), seven (two years suspended) and five years respectively, after an ICC tribunal found them guilty of spot-fixing in a case stemming from the 2010 Lord’s Test.

“I welcome the ICC’s decision and thank everyone who supported me throughout my bad time,” Butt told ESPNcricinfo. “It’s like a new lifeline for me. It’s only me who can understand what this means for me. I can’t explain how excited I am about regaining my bread and butter. I have suffered enough and I am a changed man now and have learnt my lesson. I will continue to play my cricket with good spirit.” Butt will now turn out for the Lahore Blues in the upcoming domestic T20 cup, where Blues will play the qualifying round.

The three players, as well as their agent Mazhar Majeed, were also convicted for their wrongdoings in a London court. They were charged with conspiracy to accept corrupt payments, and conspiracy to cheat with regard to the Lord’s Test, when three pre-determined no-balls were bowled – two by Amir and one by Asif – orchestrated by Butt and arranged by Majeed. While Amir and Majeed had pleaded guilty before the trial began, Butt and Asif denied the charges. Butt was sentenced to two years and six months in prison, Asif got one year and Amir, six months. Butt was released seven months into his jail sentence, in June 2012, under the UK government’s early release scheme for foreign nationals. Asif and Amir served half their sentences, in keeping with the court’s directive – that they serve half their sentence in custody and then be released on licence, with conditions which, if broken, would see them back in detention for the remainder of their term.

In January this year, with the backing of the PCB, Amir was allowed to return to domestic cricket ahead of schedule by the ICC. Explaining the concession, the ICC had said then: “The ACSU Chairman [Ronnie Flanagan] had exercised the powers vested in him under Article 6.8 of the ICC Anti-Corruption Code after he was satisfied that Amir had cooperated with the ACSU by fully disclosing his part in the matters that led to his disqualification, admitting his guilt, showing remorse and cooperating with the Unit’s ongoing investigations and by recording messages for the ACSU education sessions.”

Butt, Asif keen to return to cricket

Pakistan news August 20, 2015

Butt, Asif keen to return to cricket

Salman Butt and Mohammad Asif, who will find themselves free of ICC sanctions from September 2, are keen to play in the forthcoming Pakistan domestic season under the auspices of the Pakistan Cricket Board. The pair said they had learnt their lessons from the imprisonment and bans they had faced for their roles in a spot-fixing scandal in 2010.

Butt and Asif, along with Pakistan fast bowler Mohammad Amir, were banned by the ICC for their role in spot-fixing on Pakistan’s tour to England in 2010. While Butt faced a 10-year ban (with five years suspended), Asif was given a seven-year ban (with two years suspended) after they were found guilty in a case stemming from the 2010 Lord’s Test. The ICC confirmed on Wednesday that the players can return to competitive cricket after September 2, after fulfilling specific conditions laid down by the independent Anti-Corruption Tribunal.

According to the conditions of the tribunal, the players were required to submit a public apology and cooperate with the tribunal. In addition, they also have to undergo a lecture on anti-corruption, which will take place in due course. Both Butt and Asif had earlier apologised publicly and have committed their availability for the remainder of the process.

“I am a relieved man,” said Asif, who will turn 33 in December. “People should accept the fact that we have completed our punishment, relieved by the same body that banned us. So you can’t give more punishment for one crime. I committed a mistake, for which I have asked for forgiveness from the Almighty and have also said sorry to the nation.”

Butt, who was the captain of the Pakistan side in the Lord’s Test in 2010, said the time away from cricket had an impact on his personality and helped him learn a lot. He has been engaged by Lahore Blues in the forthcoming domestic Twenty20 tournament, which starts in the first week of September, while Asif is also negotiating with teams in the same region to kick-start his career. Amir, who was readmitted to Pakistan’s domestic cricket in January this year, is also likely to play in the T20 tournament.

Over the last five years, Butt has been training at a private fitness club and playing cricket at a private cricket academy, while Asif has occasionally played in unregistered cricket tournaments in Lahore.

“Thanks to the Almighty who has given me another lifeline and I got another opportunity to make a comeback (in cricket). I am also thankful to the ICC that it gave me an opportunity to start again,” Butt said. “The PCB has also cooperated with me for quite some time and I am thankful to them too.

“The moment I get permission to play domestic cricket, I will play. It’s true that if you don’t play competitive cricket for sometime you get rusty but with few matches it will go too. But it depends how much the player is committed. I think if you look at me personally there’s quite a change in me. In last five years the only thing I did most is thinking. It’s impossible to get back the best part of my life, which was wasted, but I have learnt a lot in those years. Only time will tell how much I have changed. I don’t know if I will be able to achieve the same peak as a cricketer but what I will ensure is to become a good human being and a good cricketer.”

Asif, who hails from Sheikhupura, was also involved in controversies other than the spot-fixing scandal. Along with Shoaib Akhtar, he tested positive for a banned steroid in 2006 and was suspended for one year. He was also detained in Dubai in 2008 for possessing opium and was released later.

When asked if he is prepared for criticism on his return, Asif said: “What if people shout and call me a cheat? I am ready for that because I have taken every tough thing in the last five years on the chin, so let the fans show their anger. I have made a resolution: to change people’s opinions and not to make the same mistake again.”

Butt’s likely stint with the Lahore Blues side is pending clearance from the PCB but a top official from the region was happy with the signing.

“We have a full faith in Butt after he has served his punishment. He is one of the good batsmen in our region and if he is fit and cleared by the ICC then I don’t see any reason not picking him for our team,” the official said.

The PCB, in a release, said it had sought further clarification from the ICC on the lifting of sanctions against Butt and Asif. “Until the world body’s response has been received and evaluated, PCB shall not be making any further comment on the issue,” the release stated

Umar Farooq is ESPNcricinfo’s Pakistan correspondent. @kalson

!میرا دل، میری جان، پاکستان پاکستان

اگست 1947 ایک سبز ہلالی پرچم دنیا کے نقشے پر اُبھرا، ایک ایسی مملکت جس کے حصول کے لیے لاکھوں لوگوں نے جانیں قربان کیں لیکن آزادی پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا۔ قائد کی انتھک محنت، کاوش اور قربانیوں کا زندہ پیکر، اے سوہنی دھرتی تیری آزاد اور پاک فضائیں ہی تو بھاتی ہیں تیرے متوالوں کو، تیرے بیٹے سرحدوں پار اور سرحدوں کے اندر بھی دہشت گردوں اور تیرے دشمنوں کے سامنے سینہ سپر ہیں۔

تیرے گلستان، پربت، جھیل، دریا تیرے حسن و پاکیزگی کے عکاس ہیں۔ اس آزادی کو محسوس کرو ان پاک فضاؤں میں، اس مٹی کی سوندھی مہک میں رب کا شکر ادا کرو۔ اس بیش قیمت نعمت کے لئے، اے عزیزِ من سب پاکستانیوں کا عزم ہے تیری سلامتی اور تیری ترقی، آزادی کاجشن برپا ہے اس وطن کی گلیوں، محلوں میں، آزادی کی خوشی عیاں ہے ان سبز پوشاکوں ان چمکتے چہروں سے ۔

یہ ذوق یہ شوق، میرے وطن تیرے جشن منانے کے لئے ہم سجائیں گے اس ارضِ زمیں کو، خود کو، یہ تیاریاں، سجاوٹ آزادی کا احساس ہی تو ہیں۔

اس جھنڈے سے اب قوم کی لاج ہے، اس جھنڈے پہ سب کی نظر آج ہے

جان سے کیوں نہ ہم کو یہ پیارا رہے، چاند روشن چمکتا ستارہ رہے

تو ہی تو ہے میرا گھر، میرے چمن، میرے وطن، میرے مقدر میں ہے ارضِ پاک پر بکھرا میرا رزق ۔۔۔

میں پاکستانی ہوں، تن سے بھی اور من سے بھی، میرا دل، میرا چہرہ پاکستانی، میرا پہنا وا، سج دھج بھی پاکستانی

آزادی ایک جنون، ایک جہدِ مسلسل، منتقل کرنا ہے مجھے، اپنی نسل کو شعور دینا ہے ارضِ پاک سے محبت کا، تعمیر کا

میرا دل، میری جان پاکستان، میری پہچان، میری شان، نثار تجھ پر جان، سدا جیوے میرا پیارا پاکستان

اے قائدِ اعظم تیرا احسان ہے یہ وطن، یہ آزادی تیری جہدوجہد، کاوشوں کا مظہر ہے، اے قائد تجھے سلام

یہ سبز پہناوا ہی تو پہچان ہے، میری آرائش کا سامان، کیوں نہ اس رنگ میں ہی سب رنگ جائیں، بچے، بوڑھے اور جوان

نثار تیری گلیوں کے اے وطن، یہ رونق، یہ شادمانی، اے پاک دھرتی کسی دشمن کے کی میلی نظر ان چمکتے چہروں پر نہ پڑے، سلامت رہیں تیرے بیٹے

ہوا کے دوش پر لہراتا یہ سبز ہلالی پرچم سدا اونچا ہی رہے گا، تیرے رکھوالے اس پرچم کو سر بلند رکھنے کے لئے ہیں پرعزم۔

!کچھ ذکر حمید گل مرحوم کا

384193-HamidGul-1439806212-178-640x480

screenshot-www express pk 2015-08-19 12-09-03یہ غازی یہ تیرے پر اسرار بندے
جنہیں تو نے بخشا ہے ذوق خدائی
دو نیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا
سمٹ کر پہاڑ ان کی ہیبت سے رائی

ہفتے کی رات ساڑھے گیارہ بجے سی ایم ایچ پسپتال مری میں قوم کے عظیم سپوت جنرل ریٹائرڈ حمید گل قضائے الہی سے انتقال کرگئے ۔

ہر ذی روح اللہ کی امانت ہے اور اس نے پلٹ کر اللہ کے ہی دربار میں جانا ہے۔ جب اللہ پاک انبیاء علیہ السلام، صحابہ کرام، اولیا اللہ، محدثین، مجددین، مجاہدین کی روحوں کو قبض کر سکتے ہیں تو اللہ نے جنرل صاحب کو بھی اپنے دربار میں واپس بلانا ہی تھا۔ جنرل حمید گل اب زندہ سے مرحوم ہوگئے اور اب اُن کے نام کے ساتھ مرحوم کا اضافہ بھی کیا جائے گا۔ یہی انسان ہے، یہی اس کی زندگی ہے اور یہی اس کی زندگی کی حقیقت بھی ہے۔

Gen. Hameed Gul, though controversial, was a staunch patriot & a brilliant strategic mind history will remember! May Allah bless his soul!

— Moeed Pirzada (@MoeedNj) August 16, 2015

جنرل صاحب سابق ڈی جی آئی ایس آئی بھی رہے ہیں۔ آپ نے آئی ایس آئی کی قیادت 1987 سے 1989 کے مشکل دور میں کی تھی۔ یہ وہ دور تھا جب سوویت یونین سے جنگ اپنے آخری مراحل میں تھی۔ جنرل صاحب کی بہترین حکمت عملی نے اس جنگ کو پاکستان کے علاقوں میں منتقل ہونے سے روکا تھا۔ بہت سے روسی اور امریکی دانشور جنرل صاحب کو سویت یونین کے ٹکڑے کرنے کا ماسٹر مائنڈ قرار دیتے ہیں۔

جنرل حمید گل قیامِ پاکستان سے قبل 20 نومبر 1939ء میں سرگودھا میں پیدا ہوئے۔ آپ کا تعلق یوسف زئی قبیلے سے تھا۔ آپ کا خاندان سوات کا رہنے والا تھا۔ جس نے سوات سے سرگودھا ہجرت کی تھی۔ ابتدائی تعلیم گاؤں میں ہی حاصل کی، جس کے بعد آپ گورنمنٹ کالج لاہور چلے گئے۔ پاکستان آرمی میں شمولیت اختیار کرنے کے بعد حمید گل نے فوجی اکیڈمی، پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول رپورٹ کیا۔ 1956ء میں آپ کو پاکستان آرمی میں کمیشن ملا اور آپ نے اپنے ملٹری کیرئیر کا آغاز کیا۔ 1965ء کی جنگ میں آپ اسکوارڈن کمانڈر رہے تھے۔ 1968ء میں آپ کمانڈ اینڈ اسٹاف کالج کوئٹہ چلے گئے۔ 1972ء سے 1976ء کے دور میں آپ نے جنرل ضیاء الحق کے ساتھ بٹالین کمانڈر کی حیثیت سے بھی فرائض سر انجام دیے۔ جنرل ضیاء الحق کے ساتھ تعلقا ت کی وجہ سے ہی بے نظیر بھٹو نے ڈی جی آئی ایس آئی کی پوزیشن سے ہٹایا تھا۔ جنرل صاحب نے دور اندیشی کا ثبوت دیتے ہوئے محاذ آرائی سے گریز کیا اور جمہوریت کی خاطر اپنی پوسٹ بھی جانے دی تھی۔ اس کے بعد جنرل حمید گل نے 1989ء میں ضربِ مومن کے نام سے بڑی جنگی مشقیں کی تھیں اور بھارت کے جنگی عزائم کو اسی وقت ٹھنڈا کر دیا تھا۔ 1991ء میں جنرل آصف نواز کے دور میں جنرل حمید گل نے آرمی سے ریٹائرمنٹ لے لی تھی۔

جنرل صاحب کی وجہ شہرت جہاد سے دلچسپی تھی۔ پاکستان کی بیشتر خرابیوں کا ذمہ دار آپ لبرل اور لیفٹ کے طبقے کو سمجھتے تھے، اور بہت سے انٹرویوز میں اس بات کا اظہار بھی کر چکے تھے۔

جذبہ جہاد سے سرشار اس مرد مجاہد نے ریٹائرمنٹ کے بعد بھی اپنے دماغ کو ریٹائر نہیں ہونے دیا تھا۔ 78 سال کی عمر میں بھی مکمل رعب کے ساتھ اپنی مخصوص گرجدار آواز میں بھارت کو للکارا کرتے تھے۔ بھارت میں جنرل صاحب کی ریٹائرمنٹ کے بعد بھی اُن کا خوف تھا اور امریکہ کیلئے وہ درد سر بنے رہے تھے۔

جنرل صاحب نے امریکیوں کے ساتھ بھی کام کیا تھا اور آپ ان کی رگ رگ سے واقف تھے۔ آپ کا شمار ان لوگوں میں سے ہوتا ہے جنہوں نے نائن الیون کے بعد اولین دور میں نا صرف نائن الیون کے سانحے پر سوالیہ نشان اٹھائے تھے بلکہ یہ بھی کہا تھا کہ اصل میں یہ سب کچھ پاکستان کے خلاف سازش ہے۔ آپ کا یہ فقرہ بہت مشہور ہوا تھا کہ

’’نائن الیون بہانہ ہے، افغانستان ٹھکانہ ہے، پاکستان نشانہ ہے ۔‘‘

آپ کی پاکستان سے محبت کسی بھی ڈھکی چھپی نہیں ہے۔ کوئی بھی باشعور فرد، خواہ اس کا تعلق بائیں ہاتھ کے طبقے سے ہی کیوں نہ ہو، آپ کی حب الوطنی پر انگلی نہیں اٹھا سکتا ہے۔ جنرل صاحب امریکہ کے بڑے نقادوں میں سے ایک تھے اور آپ نے ہمیشہ کھل کر امریکہ پر تنقید کی ہے۔ جنرل صاحب نے کھل کر جہاد کشمیر کی حمایت کی ہے۔ آپ نے وکلاء تحریک میں عدلیہ کا ساتھ بھی دیا ہے۔ آپ نے اسامہ بن لادن کو تب ہیرو کہا تھا جب پاکستان میں بن لادن کا نام لیتے ہوئے بھی لوگ گھبراتے تھے۔ جنرل صاحب کی دلیری کی وجہ سے ہی بھارت نے آپ کو اپنی موسٹ وانٹڈ لسٹ میں رکھا تھا۔ امریکہ نے جہاد سے لگاؤ کی وجہ سے ہی جنرل صاحب کا نام بین الاقوامی دہشت گردوں کی فہرست میں ڈالا تھا اور پھر یہ نام اقوام متحدہ میں بھی دیے تھے جن کو چین نے ویٹو کردیا تھا۔

جنرل صاحب امریکہ کو پاکستان کا دشمن کہتے تھے اور مجھے اب یہ بھی کہنے دیں کہ جن بنیادوں پر جنرل صاحب نے امریکہ کو دشمن ڈکلیئر کیا تھا وہ سب درست تھی۔ جولائی 2010ء میں وکی لیکس نے کچھ ڈاکومنٹس شائع کئے تھے، یہ 92 ہزار ڈاکومنٹس افغان جہاد 2004 سے 2009ء متعلق تھے۔ ان دستاویزات میں جنرل صاحب کو افغان طالبان کا ساتھ دینے پر مورد الزام ٹھہرایا گیا تھا۔

میری جنرل صاحب سے زندگی میں دو ایک ملاقاتیں ہیں۔ میں نے ہمیشہ ان کو شفیق اور محبت کرنے والا پایا ہے۔ جنرل صاحب سے مختلف موضوعات پر گائیڈ لائن بھی لیا کرتے تھے۔ میرے لئے وہ استادوں کی طرح ہی تھے۔ جنرل صاحب کے بیٹے عبداللہ گل سے بھی میری دوستی ہے۔ یہ بھی اپنے باپ کی طرح سے امت کا درد دل میں رکھتے ہیں اور جب بھی بات کرتے ہیں تو بہت ہی محبت سے بات کرتے ہیں۔ جنرل صاحب بلاشبہ موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بات کرنے والی شخصیت تھے۔ وہ کہتے تھے کہ اسنائپر کی گولی ایک کلومیٹر کے فاصلے سے بھی نشانہ خطا نہیں کرتی ہے۔ 4 انچ کی گولی اگر انسان کی جان لے سکتی ہے تو میں موت سے کیوں ڈروں۔ اگر میرے نصیب میں شہادت ہوئی تو میں شہید ہوجاؤں گا، ورنہ موت تو آنی ہے۔ جنرل صاحب صحیح معنوں میں پاکستانی اور مجاہد تھے، جنہوں نے آخری وقت تک پاکستان کا ہر محاذ پر دفاع کیا ہے۔

اللہ تعالیٰ اُن کو کروٹ کروٹ جنت نصیب کریں۔ اُن کی کوتاہیوں کو معاف کرتے ہوئے اُن کو جنت میں اعلیٰ مقام عطا کریں۔ جنرل صاحب، آپ سے انشااللہ اب رب کی جنتوں میں ملاقات ہوگی، بلاشبہ آپ نے اپنا فرض احسن طریقے سے پورا کیا ہے۔ تب تک کیلئے اللہ حافظ ، پاکستان زندہ باد۔

قدر کیجیے کہ پاکستان ایک نعمت ہے!

 

ہم ہر چیز کا ذمہ دار حکمرانوں کوٹھہراتے ہیں مگر یہ بھول جاتے ہیں کہ انہیں منتخب کرکے ایوانوں میں بھی ہم ہی بھیجتے ہیں۔

یار! یہاں کا سارا سسٹم ہی خراب ہے۔ خدا کی قسم! نفل ادا کروں گا جب اس ملک سے جان چھوٹے گی میری، عاصم جو ایم ایس سی کا امتحان تو پاس کرچکا تھا مگر ڈگری حاصل کرنے کے لیے پچھلے دو ماہ سے خوار ہو رہا تھا اور اپنے دوست طاہر سے مخاطب تھا جو اُس کا کلاس فیلو بھی تھا۔

کیا ہوگیا ہے یار! بھلا اپنے ہی ملک کے بارے میں کوئی ایسے بولتا ہے کیا؟ تو اورکیا کہوں؟ سب کچھ تیرے سامنے ہی ہے کہ کیسے اپنی ہی ڈگری حاصل کرنے کے لیے کس قدر اذیت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ہمیں، جیسے ہم یہ ڈگری امتحان پاس کرکے نہیں بلکہ پیسے دے کر لے رہے ہوں۔ میں بھی تو دو ماہ سے تیرے ساتھ ہی خوار ہو رہا ہوں، مگر اس کا یہ مطلب بھی نہیں کہ میں اپنے ہی ملک کو کوسنا شروع کردوں۔ طاہر، عاصم کے خیالات سے ہرگز متفق نہیں تھا۔ دو دن بعد آخری تاریخ ہے اسکالر شپ کے فارم جمع کروانے کی، اگر آج بھی ڈگری نہ ملی تو گئے کام سے، اللہ اللہ کرکے اس ملک سے نکلنے کا موقع مل رہا ہے اور میں یہ موقع کسی صورت بھی ضائع نہیں کرنا چاہتا۔ یار! ایسے بول رہا ہے جیسے تونے پی ایچ ڈی مکمل کرکے پاکستان واپس آنا ہی نہیں ہے۔ طاہر نے ہنستے ہوئے کہا۔ بالکل درست اندازہ لگایا ہے تو نے، میں اتنی جدوجہد پاکستان واپس آنے کے لیے نہیں کر رہا ہوں۔ عاصم نے سنجیدگی سے کہا۔

حلف نامہ جو جمع کرارہے ہو اُس میں واضح طور پر لکھا ہے کہ میں اپنی تعلیم مکمل کرکے پاکستان واپس آؤں گا اور پانچ سال تک یہاں کے اداروں میں نوکری کروں گا، اُس کا کیا؟ وہ سب تو کاغذی کارروائی ہے، اُسے کون پوچھتا ہے، یار! اور جو ضمانت دینی ہے، وہ؟ طاہر کو اُس کی باتوں پر یقین نہیں آرہا تھا۔ ہم پاکستان میں رہتے ہیں یار، یہاں بس جیب میں پیسہ ہونا چاہیے ہر مشکل حل ہوجاتی ہے۔ بس دعا کرو کہ کسی طرح مجھے یہ اسکالر شپ مل جائے، پھر نہیں میں دوبارہ پاکستان میں قدم رکھنے والا۔ کہیں بھی چلا جا، کہلائے گا تو آخر پاکستانی ہی ناں۔ طاہر کے لہجے میں اب طنز تھا۔ کب تک، آخر کب تک؟ صرف دوسرے ملک کا پاسپورٹ ملنے کی دیر ہے، پھر کونسا پاکستان اور کون پاکستانی، پھر یہ داغ بھی دھل جائے گا۔ داغ؟ کیا تیرے لیے پاکستانی ہونا ایک داغ ہے، آخرکیا خرابی ہے اس ملک میں؟

تمھارے پاکستان میں ڈھنگ کی کوئی نوکری نہیں، اور تو کہتا ہے کہ کیا خرابی ہے اس ملک میں۔ تیرے ابّو نے اپنی پوری ملازمت کے دوران ایک مرتبہ بھی رشوت نہیں لی، اور اُنہیں اس ایمانداری کا کیا صلہ دیا گیا؟ اُنہیں رشوت لینے کے جرم میں نوکری سے برخاست کر دیا گیا، اور تجھے اس ملک میں سب اچھا نظر آتا ہے۔ یہاں جس کے پاس جتنی زیادہ دولت ہے اُس کی اُتنی زیادہ عزت ہے۔ یہ ملک صرف طاقتوروں، دولتمندوں اور لٹیروں کو نوازتا ہے، ہمارے جیسوں کو تو اپنا حق لینے کے لیے بھی ایڑیاں رگڑنا پڑتی ہیں اور تجھے پھر بھی اس ملک میں کوئی خرابی نظر نہیں آتی۔ عاصم جذباتی ہوگیا تھا۔ اس میں قصور پاکستان کا نہیں، ہمارا اپنا ہے۔ یہ ملک ہمارے بڑوں نے بڑی قربانیوں سے حاصل کیا تھا، یہ ہم ہی ہیں جنہوں نے ان قربانیوں کی قدر نہ کی۔ اگر ہم ٹھیک ہوجائیں تو یہ ملک خود بخود ہی جنت بن جائے گا۔ ابھی یہ بحث نہ جانے اور کتنی دیر چلتی کہ ایک ادھیڑ عمر کلرک نے آکر آواز لگائی، اپنی ڈگریاں ایڈمن آفس سے وصول کرلیں، اور دونوں اپنی بحث چھوڑ کر ایڈمن آفس کی طرف چل پڑے۔

عاصم کو اُس کی محنت سے حاصل کی ہوئی ڈگری بھی مل گئی اور امریکہ کی اسکالرشپ بھی، امریکہ پہنچ کر اُسے ایسا لگا جیسے وہ دوزخ سے نکل کر اچانک جنت میں آگیا ہو، بالکل ویسے ہی جیسا اُس نے ہمیشہ سے چاہا تھا، اُسے اپنی قسمت پر رشک آرہا تھا۔ وقت گزرتا گیا، طاہر نے پاکستان میں مقابلے کا امتحان پاس کیا اور پولیس کا محکمہ جوائن کرلیا، عاصم کی تعلیم کا بھی امریکہ میں آخری سال تھا، مگر اُس کا پلان کے عین مطابق پاکستان واپس آنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔ یونیورسٹی میں عاصم کا ایک کلاس فیلو تھا جس کا نام جتندرکمار تھا، جتندر بھی انڈیا سے اسکالر شپ پر پڑھنے کے لیے آیا تھا۔ ایک دن عاصم کو یونیورسٹی کے کسی کام میں مدد کے سلسے میں اُس کے روم میں جانا پڑگیا۔  جتندر کے روم کا دروازہ تقریباََ کھلا ہی تھا، جب ایک دو مرتبہ دروازہ کھٹکھٹانے کے باوجود بھی جتندر باہر نہ آیا تو عاصم بغیر اجازت کے ہی اندر داخل ہو گیا۔ سامنے کا منظر عاصم کے لیے ناقابلِ یقین تھا، جتندر کمار زمیں پر جائے نماز بچھائے عشاء کی نماز پڑھنے میں مصروف تھا، ساتھ ہی ایک اسٹینڈ پر قرآن شریف رکھا تھا۔

آپ کب آئے؟ جتندر کی آواز نے سوچوں میں گم عاصم کو اپنی طرف متوجہ کیا۔ ہاں۔۔۔ بس ابھی، کیا آپ نماز پڑھ رہے تھے؟ عاصم نے فوراََ ہی وہ سوال پوچھ ڈالا جس نے اسے پچھلے کچھ لمحوں سے مخمصے میں ڈال رکھا تھا۔ کیا آپ مسلمان ہیں؟ بھائی مسلمان ہوں تو نماز پڑھ رہا ہوں، جتندر نے کولڈ ڈرنک کا گلاس عاصم کو پکڑاتے ہوئے کہا۔ آپ کا نام تو، الفاظ عاصم کا ساتھ نہیں دے رہے تھے۔ میرا نام مسلمانوں والا نہیں، یہی ناں؟ دراصل یہ نام میرے بابا نے رکھا ہی اس وجہ سے تھا کہ مجھے اپنے نام کی وجہ سے کبھی کسی رکاوٹ کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ رکاوٹ؟ رکاوٹ کیسی؟ جتندر کی بات بالکل بھی عاصم کے پلّے نہیں پڑی تھی۔

بھائی آپ خوش قسمت ہیں کہ تقسیم کے وقت آپ کے بزرگوں نے پاکستان کا انتخاب کیا، اور ہمارے بڑے، وہ تو تھے ہی قیامِ پاکستان کے مخالف، ہمارے بڑوں نے بہت سے اور مسلمانوں کی طرح بھارت میں ہی رہنے کو ترجیح دی۔ مسلمانوں کے لیے تو وہاں کچھ بھی نہیں تھا۔ میرے بابا انجینئر تھے، مگر اپنی ساری زندگی ایک معمولی سے مکینک کی حیثیت سے کام کرتے گزار دی، اُنہیں صرف مسلمان ہونے کی وجہ سے نوکری نہیں ملی۔ میرے چچا یونیورسٹی میں پڑھتے تھے، ایک دن ساتھی طلباء سے کسی بات پربحث ہوگئی۔ اگلے ہی دن سادہ کپڑوں میں ملبوس کچھ اہلکار ہمارے گھر آئے اور چچا کوزبردستی اُٹھا کرلے گئے، چند دن بعد ہمیں اطلاع دی گئی کہ ہمارے چچا پولیس اور دہشت گردوں کے درمیان ہونے والی ایک جھڑپ میں مارے گئے ہیں ۔

تو اگر ہندوستان میں رہ کر ہندوستان کے خلاف اس طرح بولتا تو تجھے معلوم پڑجاتا کہ ہمارے بڑوں نے یہ وطن حاصل کرنے کے لیے اتنی قربانیاں کیوں دی تھیں، طاہر کے الفاظ عاصم کے کانوں میں گونج رہے تھے۔ ابھی پچھلے دنوں ہی ہمارے محلے کی ایک مسلمان لڑکی کو چند اوباشوں نے اپنی ہوس کا نشانہ بنا کر قتل کردیا. سب جانتے ہیں کہ ایسا کس نے کیا، اور اُن کا مذہب کیا تھا، گجرات کا ہندو مسلم فساد کسے یاد نہیں، میرے بابا نے میرا نام صرف اس لیے ہندؤں والا رکھ دیا تاکہ مجھے بھی اُن کی طرح مسلمان ہونے کی وجہ سے ہر جگہ امتیازی سلوک کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ میرے بابا کا یقین تھا کہ اگر بھارت میں ہمارے لئے کچھ ہوتا تو محمد یوسف خان کو مشہور ہونے کے لیے دلیپ کمار نہ بننا پڑتا۔ جتندر کی بات ابھی جاری تھی مگر عاصم میں سننے کی مزید سکت نہیں تھی، وہ چپ چاپ اُٹھ کر کمرے سے باہر آگیا۔

screenshot-www express pk 2015-08-19 12-02-34 screenshot-www express pk 2015-08-19 12-03-07 screenshot-www express pk 2015-08-19 12-02-49

آج اُسے آزادی کا مطلب بھی سمجھ آ گیا تھا اور پاکستان کی اہمیت کا احساس بھی ہوگیا تھا۔ آج شعور کی آنکھ کھلی تو اُسے امریکہ میں بھی سب کچھ بدلا بدلا سا نظرآ رہا تھا، یہاں قانون کی بالادستی صرف اس وجہ سے ہے کیونکہ یہاں کے لوگ قانون کا احترام کرتے ہیں، اور ہم بھی صرف ان جیسے ملکوں میں آ کر ہی قانون کا احترام سیکھتے ہیں ورنہ پاکستان میں تو ہر چیز کا شارٹ کٹ ہی تلاش کرتے رہتے ہیں۔ اگر پاکستان میں ہم پر چھوٹا سا بھی ٹیکس نافذ کردیا جائے تو ہم سڑکوں پر آجاتے ہیں۔ مگر یہاں ہمیں سب اچھا ہی نظر آتا ہے۔ ہم ہر چیز کا ذمہ دار حکمرانوں کو تو ٹھہراتے ہیں مگر یہ بھول جاتے ہیں کہ ان حکمرانوں کو منتخب کرکے ایوانوں میں بھی تو ہم خود ہی بھیجتے ہیں۔ میں آج جس مقام پر ہوں وہ بھی تو پاکستان کی وجہ سے ہی ہے، جس تعلیم کی بنیاد پر مجھے یہ اسکالرشپ ملا وہ بھی تو میں نے پاکستان میں رہ کر ہی حاصل کی تھی۔ عاصم کو سمجھ آ گیا تھا کہ ہم دوسروں سے پیچھے کیوں ہیں، ہماری اس حالت کا ذمہ دار پاکستان نہیں بلکہ ہم خود ہیں، ہمارے پیارے وطن نے تو ہمیں سب کچھ دیا مگر ہم ہی ناشکرے ہیں جنہوں نے ہمیشہ پاکستان میں صرف خامیاں ہی تلاش کیں۔

ابھی وہ ان سوچوں میں ہی گم تھا کہ پاکستان سے طاہر کا SMS آگیا، جشنِ آزادی مبارک۔ مجھے تو یاد بھی نہیں تھا کہ آج 14 اگست ہے، ان چار سالوں میں میں کتنا بدل گیا ہوں کہ اپنی آزادی کا دن بھی بھول گیا۔ اُسے اپنے آپ سے شرم آ رہی تھی۔ بس یار Phd تو کمپلیٹ ہوگئی ہے مگر یونیورسٹی والے کہتے ہیں کہ ڈگری دو ماہ بعد ملے گی، عاصم فون پر طاہر کو ہنستے ہوئے بتا رہا تھا۔ بس اِدھر ڈگری ملی، اُدھر میں اپنے ’’پاکستان‘‘ آنکھوں سے آنسو رواں تھے مگر دل سے بوجھ اُتر چکا تھا۔

’’پاکستان زندہ باد‘‘

پاکستان کو سالگرہ مبارک!

14th August 2015

آج یوم آزادی پاکستان منایا جارہا ہے،وہ دن جب مسلمانانِ برصغیر کو رب العزت نے ان کا اپنا گھر عطا کیا.

ہر سال کی طرح اس سال بھی 14 اگست کو پاکستان کی آزادی کا جشن منانے والوں کا جوش و خروش اپنے عروج پر ہے.

کہیں عمارتوں کو روشنیوں سے سجایا گیا تو کہیں گھروں پر چراغاں کیا گیا اور گاڑیوں ،موٹر سائیکلوں کے ساتھ ساتھ گلی گلی، کوچے، کوچے سبز ہلالی پرچموں کی بہار تو دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے.

بچوں، بڑوں سب نے پاکستان کو اپنے انداز میں “سالگرہ مبارک” کہا اور وطن عزیز کی ترقی و خوشحالی کے لیے دعائیں مانگیں.

ہماری دعا ہے کہ خدا پاکستان کو ہمیشہ قائم و دائم رکھے.

 

راولپنڈی میں ایک شخص نے پاکستانی جھنڈے کے رنگوں پر مشتمل ماسک پہن رکھا ہے—۔فوٹو/ اے پی پی

اسلام آباد میں جھنڈے فروخت کرنے والے ایک شخص کے بچوں نے پاکستانی فوجیوں کا روپ دھار رکھا ہے—۔فوٹو/ اے پی اسلام آباد میں جھنڈے فروخت کرنے والے ایک شخص کے بچوں نے پاکستانی فوجیوں کا روپ دھار رکھا ہے—۔فوٹو/ اے پی

لاڑکانہ میں ایک بچی نے سبز اور گرین رنگ پر مشتمل ماسک پہن رکھا ہے —۔فوٹو/ اے پی پی لاڑکانہ میں ایک بچی نے سبز اور گرین رنگ پر مشتمل ماسک پہن رکھا ہے —۔فوٹو/ اے پی پی

اسلام آباد کے دو نوجوانوں نے پاکستانی جھنڈے کے رنگوں کی مناسبت سے فیس پینٹنگ کرا رکھی ہے—۔فوٹو/ اے پی

ایبٹ آباد میں نوجوانوں نے پاکستان سے محبت کے اظہار کے لیے ہاتھوں میں سبز اورسفید بینڈز پہنے—۔فوٹو/ آن لائن

ایبٹ آباد میں نوجوانوں نے پاکستان سے محبت کے اظہار کے لیے ہاتھوں میں سبز اورسفید بینڈز پہنے—۔فوٹو/ آن لائن

لاہور میں ایک عمارت کے سامنے جشن آزادی کے سلسلے میں منعقدہ تقریب کے دوران میوزیکل بینڈ پرفارم کرتے ہوئے—۔فوٹو/ رائٹرز

جناح یونیورسٹی، کراچی کی طالبات نے چہرے پر پاکستانی جھنڈے کے رنگوں کی مناسبت سے پینٹنگ کرا رکھی ہے—۔فوٹو/ پی پی آئی

لاہور میں ایک شخص ایک عمارت پر پاکستان کا جھنڈا لگاتے ہوئے—۔فوٹو/ رائٹرز

مینار پاکستان،لاہور کے سامنے سے پاکستان کا جھنڈا اٹھائے طالب علم گزر رہے ہیں—۔فوٹو/ آن لائن

 

 

 

 

 

10 غذائیں جو آپ کو جوان رکھیں

کون شخص ہے جو بڑھاپے کے آثار اپنے چہرے یا جسم پر دیکھنا پسند کرے؟ مگر عمر کا ایک دور ایسا آتا ہے جب شخصیت کے حوالے سے تشویش بڑھنے لگتی ہے۔

مگر کچھ غذائیں ایسی ہوتی ہیں جو ان فکروں سے نجات دلانے میں مددگار ثابت ہوسکتی ہیں کیونکہ عمر کے لحاظ سے درست خوراک نہ صرف موٹاپے اور جسمانی دفاعی نظام کو قابو میں رکھتی ہے بلکہ ان کے چند فوائد ایسے ہوتے ہیں جو جھریوں سے تحفظ، بالوں کو چمک اور دیگر بڑھاپے کی علامات کو دور رکھتے ہیں۔

تو ایسی ہی چند غذاﺅں کے بارے میں جانے جو اپنے فیٹی ایسڈز، منرلز اور دیگر اجزاءکی بدولت جلد اور بالوں کو صحت مند رکھ کر آپ کی شخصیت کو جوان ظاہر کرتی ہیں۔

کافی

AdiL

ہر صبح کافی کا ایک کپ نہ صرف دن کا آغاز پرمسرت کرتا ہے بلکہ اس کے حیاتیاتی طور پر متحرک اجزاءآپ کی جلد کو رسولیوں سے بھی تحفظ دیتے ہیں۔ ایک حالیہ تحقیق کے مطابق کافی کا زیادہ استعمال لوگوں کی جلد کو ڈھلکنے سے بچاتا ہے جبکہ کینسر کا خطرہ بھی کم ہوجاتا ہے۔ اسی طرح جھریوں کا خطرہ بھی کم ہوتا ہے۔

تربوز

موسم گرما میں پیاس بجھانے والا یہ پھل لائیکوپین نامی جز سے بھرپور ہوتا ہے۔ اینٹی آکسائیڈنٹ سے بھرپور یہ جز تربوز اور ٹماٹر کو سرخ رنگ دیتا ہے اور جلد کو سورج کی شعاعوں سے ہونے والے نقصان سے بچاتا ہے۔ ایک تحقیق کے مطابق تربوز میں ٹماٹروں کے مقابلے میں 40 فیصد زیادہ نباتاتی کیمیکل ہوا ہے جو سن اسکرین کی طرح آپ کی جلد کی چمک دمک برقرار رکھنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

انار

اس جادو اثر پھل کے بیج اینٹی آکسائیڈنٹس اور وٹامن سی سے بھرپور ہوتے ہیں اور چہرے کو جھریوں، خشکی اور دیگر عوارض سے بچانے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔ ایک تحقیق کے مطابق وٹامن سی کا استعمال درمیانی عمر میں جلد کو خشکی اور جھریوں کا امکان کم کرتا ہے۔ اس کے علاوہ انار میں موجود اینتھوسیان جلد کو پرکشش انداز جبکہ ایلیجک ایسڈ سورج کی شعاعوں سے ہونے والے نقصانات کی روک تھام کرتے ہیں۔

بلیو بیریز

یہ پھل چہرے کی سرخی کو بڑھانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔ اس پھل میں موجود وٹامن سی اور ای جلد کو جگمگاتے ہیں اور حلقوں وغیرہ کا مقابل کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ اس میں پائے جانے والے دیگر اجزاءجلد کی رنگت کو سنوارنے کا کابھی کرتے ہیں۔

سبز پتوں والی سبزیاں

پالک سے لے کر ساگ تک یہ طاقت کے خزانے سے بھرپور سبزیاں کیروٹین نامی جز سے بھرپور ہوتی ہیں جو جلد کے خلیات کو تحفظ دینے کے ساتھ ساتھ ان میں نمی کو برقرار رکھتا ہے جبکہ جلد کو ہونے والے نقصانات کو دور رکھنے میں بھی مددگار ثابت ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ بلڈ پریشر پر قابو پانے کے لیے بھی ان سبزیوں کو اہم تصور کیا جاتا ہے۔

مشروم

مشروم میں ایک منرل سیلینیم شامل ہوتا ہے جو جلد کو سورج کی شعاعوں سے ہونے والے نقصان سے تحفظ دیتا ہے۔ ایک تحقیق کے مطابق مشروم کا استعمال جسم میں تانبے یا کاپر کی سطح کو متوازن رکھتا ہے جس کے نتیجے میں ان کے بالوں میں سفیدی جلد نہیں آپاتی یعنی بڑھاپا جلد آپ کی شخصیت پر قابو پانے میں ناکام رہتا ہے۔

انڈے

آپ کے انگلیوں کے ناخن پروٹین سے بنتے ہیں تو صاف ظاہر ہے جس میں پروٹین کی کمی انہیں کمزور کرسکتی ہے۔ اس سے تحفظ کے لیے انڈون کا استعمال زبردست ہے جو بی کمپلیکس وٹامن سے بھرپور ہوتے ہیں جو جسم میں پروٹین کی کمی نہیں ہونے دیتے۔ اس کے علاوہ انڈوں میں شامل پروٹین سے بلڈپریشر میں کمی آتی ہے اور امراض قلب کا خطرہ بھی کم ہوجاتا ہے۔

اخروٹ

By AdiL KhaN NiaXi NiaZi

اومیگا تھری فیٹی ایسڈ اور وٹامن ای سے بھرپور یہ خشک میوہ آپ کے بالوں میں نمی برقرار رکھنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں، اس کے علاوہ ان میں کاپر کی مقدار بھی کافی ہوتی ہے جو جلد اور بالوں کے قدرتی رنگ کو برقرار رکھنے میں مدد دیتے ہیں جبکہ اس منرل کی کمی آپ کے بالوں کو قبل از وقت سفید کرسکتی ہے۔

آم

آم بیٹا کروٹین سے بھرپور ہوتے ہیں جو آپ کی جلد کو اپنی مرمت خود کرنے کی صلاحیت دیتا ہے اور چہرے پر جھریوں کی آمد کو بھی روکتا ہے۔ اس کے علاوہ جلد کو ملائم رکھنے کے لیے بھی اس مزیدار پھل کا استعمال اہمیت رکھتا ہے۔اس کے علاوہ آم میں وٹامن اے بھی ہوتا ہے جو خلیات کو تحفظ دے کر انہیں تنزلی سے بچاتا ہے۔

خربوزے

خربوزوں میں بھی بیٹا کروٹین اور وٹامن اے پائے جاتے ہیں جو نہ صرف آپ کے سر کے جلدی خلیات کی نشوونما کو کنٹرول کرتے ہیں بلکہ جلد کی اوپری تہہ کی چمک بھی بڑھاتے ہیں۔ یہ چہرے پر جلد کو مردہ ہوکر پرت کی شکل میں بھی تبدیل نہیں ہونے دیتے۔

Ten reasons why Indians should love Pakistan – DailyO Indian News Agency

Independence Day is just around the corner, and it is our duty to wish and thank our neighbours for these goodies.

1. Cricket: The sport wouldn’t have been the same for India, if it wasn’t for India versus Pakistan matches. There wouldn’t be one such soul on our side, and across the border, who wouldn’t agree with this. I mean, this nation wouldn’t have taken much interest in the English game, if our neighbours wouldn’t have been an active part of it. And then, obviously, we as a nation wouldn’t have enjoyed the “mauka mauka” ads that much as well.


2. Beautiful women: I don’t think I need to elaborate this point much. For some weird reason, the other side of the border has definitely got prettier females than our side. From donning simple salwar kameez attires to a western outfits – Pakistani women are definitely prettier, at least if you consider the subcontinent. Period. Even their politicians appear graceful with their hijabs.

3. Chand Nawab: He has to be the first soul from the subcontinent who went viral, before the word viral went viral. Chand Nawab is a legacy in his own right. Not only does he show how many PTCs (piece to camera) a journalist can actually give, but also inspires our finest directors to portray the real life character in reel life. What a legend! Oh, and in case you’ve missed it, another such video is making the rounds on Youtube. Go check it.

4. Zindagi channel: Okay this is a bit enforced here, and nothing to do with my inclination towards Pakistani soaps, but this famous entertainment channel that our mothers (and now our fathers) have gotten glued to, thanks to the curiosity and excitement the serials have evoked to find out how the society progresses on the other side of the border, is a godsend. Why? Because finally, we’ve got rid of those repetitive “saas bahu soaps”. Good riddance!

5. Coke Studio: Who’d have thought something as great and entertaining as Coke Studio would pop out of Pakistan. I mean looking at our diversity, cultures, religions and faiths (and godmen/godwomen too) one would really think why something as cool as Coke Studio never happened in India first?


6. Mangoes: You haven’t had it all, if you haven’t had Pakistani mangoes. If we have the famous langras then they have the sindhri; if we have the chausa then they have the desi gola. No, I’m not dissing our own varieties, but bringing to light the fact that Pakistani mangoes are a must for the ardent lovers of this fruit.


7. Umer Sharif: Tagged as the “King of Comedy”, Umer was a talent powerhouse. His sense of comedy, dialogue delivery and body language set him apart and made him a household name in both the countries. His recorded stage shows played an important part in his success. And if you haven’t seen “Yes Sir Eid, No Sir Eid”, and “Bakra Qistoon Pay” then you have really missed some quality comic performances.

8. Human development index: It’s nothing less than ironic that such an important economic index was developed by a Pakistani Noble laureate, Mahbub-ul-Haq. The index did shift the focus of economists and policymakers from income and human-centred indices. And today it is widely respected and followed by economists from around the world. Well, the fact that Pakistan is fighting various internal problems can be ignored for a while.

9. Brain: Another feather that rests on Pakistan’s hat – the world’s first virus for MS-DOS was written by Pakistani brothers. “Brain” was written by Basit Farooq Alvi and Amjad Farood Alvi in Lahore, Pakistan in 1986. The brothers told TIME magazine they had written it to protect their medical software from piracy, and it was supposed to target copyright infringers only.

10. Nusrat Fateh Ali Khan: As a generation , we’ve come a long way from Qawwalis and Sufi songs. But my first exposure of Qawwali and Sufi music can be traced back to this great musician. Widely considered as one of the greatest voices ever to be recorded, besides being a rage in the subcontinent, Nusrat Fateh Ali Khan was also one of the first few artists to collaborate with Western artists. And he is probably the only Qawwal artist that the coming generations would relate to.



#Independence Day, #Chand Nawab, #Pakistan